Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

کوئی مائی کا لعل قائد تحریک جناب الطاف حسین سے ان کی پاکستانیت نہیں چھین سکتا، ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی


کوئی مائی کا لعل قائد تحریک جناب الطاف حسین سے ان کی پاکستانیت نہیں چھین سکتا، ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی
 Posted on: 5/16/2014
کوئی مائی کا لعل قائد تحریک جناب الطاف حسین سے ان کی پاکستانیت نہیں چھین سکتا، ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی 
جس قائد نے ہمیں شناخت دی آج اسی کی شناخت کو چھیننے کی کوشش کی جارہی ہے ، حیدر عباس رضوی 
شناختی کارڈجاری نہ کرکے دستورپاکستان کی توہین کی گئی ہے ، کنور نوید جمیل 
شناختی کارڈ جاری نہ کرکے کروڑوں عوام کی دل آزادی کی گئی ، وزارت داخلہ معافی مانگے، عبد الحسیب 
شناختی کارڈ جاری نہ کرکے جناب الطاف حسین کو بنیادی حق اور تشخص سے محروم کیاجارہا ہے ، ڈاکٹر صغیر احمد 
جناب الطاف حسین کا شناختی کارڈ جاری نہیں کیا گیا تو احتجاجی مظاہرے ملک بھر میں ہوں گے ، اشفاق منگی 
نادرا کے دفتر (میراں محمد شاہ ) نزد کار ساز روڈ پر منعقد کئے گئے احتجاجی مظاہرے کے شرکاء سے خطاب 
کراچی ۔۔۔16مئی 2014ء 
متحدہ قومی موومنٹ کی رابطہ کمیٹی کے ڈپٹی کنوینر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ پاکستانی شناخت صرف کاغذ کا ٹکڑا نہیں ہے اورکوئی مائی کا لعل قائد تحریک جناب الطاف حسین سے ان کی پاکستانیت نہیں چھین سکتا ، 4اپریل کو جناب الطاف حسین کا فارم ، فنگر پرنٹ اور تصویر لی گئی جس کی تصدیق کی گئی اور رسید دی گئی دس دن کے بعد وزارت داخلہ نے اس بات کی تصدیق بھی کردی کہ جناب الطاف حسین کی درخواست ہمیں موصول ہوچکی ہے جب وزارت داخلہ نے تصدیق کردی تو پھر کس کا حکم تھا کہ جناب الطاف حسین کے شناختی کارڈ کو روک دیا گیا یہ کسی ڈیٹا یا فرد کی غلط نہیں ہے بلکہ یہاں سے بدنیتی اور سازش کی بوآرہی ہے ۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے جمعہ کے روزوزارت داخلہ کی جانب سے قائد تحریک جناب الطاف حسین کو قومی شناختی کارڈ جاری نہ کئے جانے کے خلاف اور ان سے اظہار یکجہتی کیلئے نادرا کے دفتر (میراں محمد شاہ ) نزد کار ساز روڈ پر منعقد کئے گئے احتجاجی مظاہرے کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ احتجاجی مظاہرے کے شرکاء نے اپنے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر جناب الطا ف حسین کے آئینی اور قانونی حق کے حصول کیلئے نعرے ، مطالبات اور کلمات تحریر تھے ۔ احتجاجی مظاہرے کے شرکاء ’’جاری کرو جاری کرو شناختی کارڈ کرو ‘‘ ’’وزارت داخلہ ہائے ہائے ‘‘نعرہ الطاف جئے الطاف ‘‘ اور دیگر دیگر فلک شگاف نعرے لگا رہے تھے ۔ ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے اپنے خطاب میں کہاکہ الطاف حسین کو ساری دنیا جانتی ہے ان کو شناخت کے لئے ان کو کسی کارڈ اورریکارڈ کی ضرورت نہیں ہے ، وہ عناصر جنہوں نے پاکستان پر اپنا قبضہ کر رکھا ہے وہ جانتے ہیں کہ جناب الطاف حسین آنے کی تیاریوں کے سلسلے میں اپنا شناختی کارڈ بنوارہے ہیں جس کے حصول کیلئے انہوں نے پاکستان کے آئین و قانون کے مطابق طے شدہ طریقہ کار مکمل کیا ہے ، جناب الطاف حسین عام پاکستانی نہیں لیکن عام پاکستانیوں کی طرح زندگی گزارتے رہے ہیں اور وہ پاکستانیوں کے دلوں میں بستے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ کارکنان ان کی جانب سے ان کا حق لینے کیلئے یہاں احتجاجی مظاہرہ کیاجارہاہے ، حکمراں نادرا کے ادارے کو اپنا غلام سمجھتے ہیں ہم بتانا چاہتے ہیں کہ جن لوگوں نے آزادی کو اپنا حق سمجھتے ہوئے برصغیر کے تمام مسلمانوں کو آزادی دلوائی اور شناخت دی وہ پھر اٹھیں گے تو اپنا حق حاصل کرکے رہیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ جناب الطاف حسین کے شناختی کارڈ کا سوچ کر کئی لوگوں کے ذہن کے سوئچ اڑگئے ہیں کیونکہ وہ جانتے ہیں جناب الطاف حسین ہی واحد شخصیت ہیں جو پاکستان کو آباد اور روشن کرسکتے ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ کراچی شہر اور ملک جواب مانگ رہا ہے کہ جناب الطاف حسین کو ان کا شناختی کارڈ کیوں جاری نہیں کیاجارہا ہے اور ان کے چاہنے والوں کو تکلیف اور درد کیوں پہنچایا جارہا ہے ۔ رابطہ کمیٹی کے رکن حیدر عباس رضوی نے کہاکہ میڈیا اور سوشل میڈیا پر موجود لوگ اور کالم نگار یہ سوال کررہے ہیں کہ آخر قائد تحریک جناب الطاف حسین کے شناختی کارڈ کا مسئلہ آخر ہے کیا اور ایم کیوایم اس پر پاکستان بھر میں مظاہرے کیوں کررہی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ آج سے 30، 35برس پہلے کی بات ہے ہمارا کوئی نام نہیں تھا اور ہماری کوئی شناخت و پہنچان نہیں تھی جبکہ آج بھی ہمیں پاکستانی اس طریقے سے تسلیم نہیں کیا جاتا جیسے ہمارا حق ہے ایسے میں ایک مرد آہن ہمارے درمیان میں سے اٹھا اس نے 35برس کی جدوجہد کی اور ہمارے مستقبل پر سب کچھ قربان کردیا جیسے آج دنیا جناب الطاف حسین کے نام سے جانتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ جناب الطاف حسین نے ایسا کیا جرم کیا ہے کہ ایک مذموم سازش کے ذریعے ان کی شناخت کو باقاعدہ چھینا جارہا ہے جس قائد نے ہمیں شناخت دی آج اسی کی شناخت کو چھیننے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ کوئی ایک جائز وجہ ہمیں بتائی جائے کہ جناب الطاف حسین کے شناختی کارڈ کے اجرا میں کیا رکاوٹ ہے ؟ چالیس دن گزر گئے ہیں اگر دینا ہے تو دے دیجئے نہیں دینا تو کہہ دیجئے کہ نہیں دینا چاہتے ۔انہوں نے کہاکہ جناب الطاف حسین کی جیسی تصویر آئی ہے اسی تصویر پر شناختی کارڈ جاری کردیاجائے ہمیں اپنے قائد کا کوئی فوٹو سیشن نہیں کرانا ہے ورنہ ہمیں ٹھوس ثبوت دیئے جائیں کہ کیا وجوہات ہیں کہ کن بنیادوں پر جناب الطاف حسین کو شناختی کارڈ جاری نہیں کیاجارہا ہے ۔ ؟رابطہ کمیٹی کے رکن کنور نوید جمیل نے کہاکہ پاکستان کے ایک ایک شہری کا یہ بنیادی حق ہے کہ اس کے پاس پاکستان کا شہری ہونے کی دستاویز ، شناختی کارڈ اور دنیا بھر میں سفر کرنے کیلئے پاکستانی پاسپورٹ ہونا چاہئے یہ حق صرف پاکستانیوں کو حاصل نہیں بلکہ پوری دنیا کے عوام کو یہ حق حاصل ہے ۔ انہوں نے کہاکہ موجودہ حکومت نے ایک ایسے رہنما اور لیڈر کو جوپورے پاکستان میں سب سے زیادہ مقبول ہے ایسے لیڈر اوررہنما کو شناختی جاری نہ کرکے دستورپاکستان اورجناب الطاف حسین کے کروڑوں چاہنے والوں کی توہین کی گئی ہے ۔انہوں نے کہاکہ جناب الطاف حسین کو شناختی کارڈ جاری نہ کرنے والے لوگ انتہائی ناعاقبت اندیش ہیں جو جناب الطاف حسین کی عوامی قوت کو جانتے ہوئے بھی ایسے ہتھکنڈے استعمال کررہے ہیں اور ملک کے مسائل میں نیا اضافہ از خود پیدا کررہے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ وزیراعظم اور وزارت داخلہ جناب الطاف حسین کو فوری شناختی کارڈ جاری کریں ورنہ موجودہ حکومت اس جرم میں برابر کی شریک ہوگی ۔ایم کیوایم رابطہ کمیٹی کے رکن اشفاق منگی نے کہا کہ قائد تحریک جناب الطاف حسین کا شناختی کارڈ جاری نہیں کیا گیا تو احتجاجی مظاہرے ملک بھر میں ہوں گے ، وزیراعظم نواز شریف ، وزارت داخلہ سے جناب الطاف حسین کو شناختی کارڈ جاری نہ کرنے سختی سے جواب طلبی کریں اور کروڑوں عوام کے جذبات کو ٹھنڈا کریں ۔ ایم کیوایم رابطہ کمیٹی کے رکن ڈاکٹر صغیر احمد نے کہا کہ کروڑوں دلوں پر حکمرانی کرنے والے ہر دلعزیز قائد جناب الطاف حسین کو قومی شناختی کارڈ جاری نہ کرکے بنیادی حق اور تشخص سے محروم کیاجارہا ہے جبکہ ایشو کوئی نہیں ہے اور نان ایشو کو ایشو بنا کرکروڑوں لوگوں کے جذبات سے کھیلاجارہا ہے اور لوگوں کو مجبور کیا گیا ہے کہ وہ احتجاج کریں ۔انہوں نے کہاکہ ایسی کیا وجہ ہے کہ شناختی کارڈ کا حصول اتنا پیچیدہ بنا دیا گیا ہے اور اس ایشو پر سب میں بے چینی پائی جارہی ہے ۔ رابطہ کمیٹی کے رکن عبد الحسیب نے کہاکہ 4اپریل 2011ء کو جب جناب الطاف حسین نے تمام دستاویزات مکمل کرنے کے بعد قومی شناختی کارڈ کے اجراء کیلئے درخواست جمع کرائی لیکن وہ ابھی تک حکمرانوں کے متعصب طرزِعمل کی وجہ سے شناختی کارڈ سے محروم ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ جناب الطاف حسین کو شناختی کارڈ کا اجراء نہ کرنے پر وزارت داخلہ کے حکام کی پرزور مذمت کرتے ہیں کیونکہ وزارت داخلہ نے جناب الطاف حسین کا شناختی کارڈ جاری نہ کرکے کروڑوں عوام کے دلوں کی دل آزادی کی ہے جس پر وزارت داخلہ معافی مانگے ۔ انہوں نے کہاکہ آج کا مظاہرہ ٹوکن مظاہرہ ہے آج کے مظاہرہ کے باوجود سنجیدگی کا مظاہرہ نہ کیا گیا تو قومی ، صوبائی اور سینیٹ کے ایوانوں کے ساتھ ساتھ ملک بھرمیں احتجاج ہوگا ۔ 

12/2/2016 1:54:15 PM