Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

ملک کو انتشار اور نفاق میں مبتلا کرنے کے اقدام سے ہر ممکنہ گریز کیا جائے، الطاف حسین


ملک کو انتشار اور نفاق میں مبتلا کرنے کے اقدام سے ہر ممکنہ گریز کیا جائے، الطاف حسین
 Posted on: 4/5/2014 1
ملک کو انتشار اور نفاق میں مبتلا کرنے کے اقدام سے ہر ممکنہ گریز کیا جائے، الطاف حسین
سابق صدر پرویز مشرف کے معاملے کو ذاتی پسند ناپسند کے بجائے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر حل کرنے کی کوشش کی جائے
ہم سب کو اس حقیقت کو ہرگز فراموش نہیں کرنا چاہیے کہ پاکستان اس وقت سفارتی محاذ پر تنہا ہے اور ہم سے محبت کے دعویدار بھی ہم سے مخلص نہیں ہیں
عوام کو درپیش گونہ گوں مسائل کو حل کرنے کی حتی المقدور کوشش کریں، منتخب عوامی نمائندوں کو ہدایت
عوام کو زیادہ سے زیادہ سہولیات اور ریلیف فراہم کرنے کی جدوجہد جاری رکھیں
برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمشنر واجد شمس الحسن کی ایم کیوایم انٹرنیشنل سیکریٹریٹ الطاف حسین سے الوداعی ملاقات کی
ملک کی نازک صورتحال میں آپ جیسے تجربہ کار اور باصلاحیت ہائی کمشنر کی ضرورت تھی، الطاف حسین
واجد شمس الحسن نے اپنے چھ سالہ دور میں بھر پور تعاون پر جناب الطاف حسین کا شکریہ ادا کیا
لندن ۔۔۔5،اپریل 2014ء
متحدہ قومی موومنٹ کے قائدجناب الطاف حسین نے حکمرانوں، عسکری حکام اوربیوروکریسی کومخاطب کرتے ہوئے کہاہے کہ سابق صدرجنرل پرویزمشرف کے معاملے کوذاتی پسندناپسندکے بجائے انسانی ہمدردی اورمیرٹ کی بنیادپر حل کرنے کی کوشش کی جائے اور ملک کومزید انتشار اور نفاق میں مبتلاکرنے کے اقدام سے گریزکیاجائے ۔ انہوں نے یہ بات ایم کیوایم انٹرنیشنل سیکریٹریٹ لندن میں پاکستان کے ہائی کمشنرواجدشمس الحسن کے اعزازمیں دیئے گئے الوداعی ظہرانے کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہی۔ ظہرانے میں ایم کیوایم کی رابطہ کمیٹی کے ڈپٹی کنوینر ندیم نصرت، ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی، دیگراراکین رابطہ کمیٹی،حق پرست، سینیٹرز، ارکان قومی وصوبائی اسمبلی اورایم کیوایم کے مختلف شعبہ جات کے ارکان نے شرکت کی۔
قبل ازیں برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمشنر واجد شمس الحسن نے جناب الطاف حسین سے الوداعی ملاقات کی جس میں ملک کی مجموعی صورتحال اور باہمی دلچسپی کے مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔جناب الطاف حسین نے واجدشمس الحسن کو ان کی چھ سالہ خدمات کو سراہتے ہوئے کہاکہ اس وقت ملک جس نازک صورتحال سے گزررہاہے اس میں آپ جیسے تجربہ کار اورباصلاحیت ہائی کمشنر کی ضرورت تھی، بہرحال ہم حکومت کے فیصلے کااحترام کرتے ہیں ۔ واجدشمس الحسن نے اپنے چھ سالہ دورمیں بھرپورتعاون پر جناب الطاف حسین کا شکریہ ادا کیا۔ظہرانے کے موقع پرشرکاء سے گفتگو کرتے ہوئے جناب الطاف حسین نے حکومت، عسکری حکام اور بیوروکریسی کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ میں دعاگو ہوں کہ وہ جنرل پرویز مشرف کے معاملہ کو ذاتی پسند ناپسند کا معاملہ بنانے کے بجائے اسے مکمل میرٹ اور قومی مفاد کے تحت حل کرنے کی کوشش کریں گے ۔ اس وقت پاکستان کو جن داخلی وخارجی بحرانوں کا سامنا ہے ان کا تقاضہ ہے کہ ملک کوانتشار اورنفاق میں مبتلا کرنے کے اقدام سے ہرممکنہ گریز کیا جائے کیونکہ اسی میں ملکی سلامتی اور بقاء پنہاں ہے ۔ جناب الطاف حسین نے مزید کہاکہ ہم سب کو اس حقیقت کو ہرگز فراموش نہیں کرنا چاہیے کہ پاکستان اس وقت سفارتی محاذ پر تنہا ہے اور ہم سے محبت کے دعویدار بھی ہم سے مخلص نہیں ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ میں صرف پرخلوص رائے اور مشورہ ہی دے سکتا ہوں ، حکم نہیں ، باقی جو آپ کریں وہ آپ کی مرضی ہے ۔
جناب الطاف حسین نے پاکستان سے آئے ہوئے منتخب اراکین اسمبلی سے کہاکہ عوام نے آپ کو ووٹوں سے منتخب کیا ہے لہٰذا آپ پر یہ واجب ہے کہ آپ ووٹوں کی اس امانت کا تقدس برقراررکھیں اور اپنے حلقوں کے عوام کو درپیش گونہ گوں مسائل کو حل کرنے
کی حتی المقدور کوشش کریں۔ انہوں نے کہاکہ مجھے اس بات کا بخوبی علم ہے کہ ایم کیوایم ، حکومت میں نہیں ہے اور ترقیاتی فنڈز کی منظوری اور شہری سہولیات کے بڑے منصوبوں کی تکمیل آپ کے دائرہ اختیار سے باہر ہے تاہم آپ عوام کو زیادہ سے زیادہ سہولیات اورریلیف فراہم کرنے کی جدوجہد جاری رکھیں ۔ مجھے امید ہے کہ انتھک کاوشوں اور جانفشانی سے آپ عوام کو درپیش کچھ نہ کچھ مسائل حل کروانے میں ضرور کامیاب ہوں گے ۔ انہوں نے حق پرست اراکین پر زوردیا کہ وہ اپنے اپنے علاقوں میں زیادہ سے زیادہ تعلیمی ادارے اور لائبریریز قائم کرنے اور تعلیمی معیار کو بہتر بنانے پر خصوصی توجہ دیں۔

12/9/2016 11:25:31 AM