Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

بعض سیاسی تجزیہ نگاروں اور تجربہ کار اینکرپرسنز کامسلح افواج کے بارے میں جماعت اسلامیکی لن ترانی کو سیاسی معاملہ قراردینا اور فوج کو تنقید کا نشانہ بنا ناافسوسناک ہے۔ الطاف حسین


بعض سیاسی تجزیہ نگاروں اور تجربہ کار اینکرپرسنز کامسلح افواج کے بارے میں جماعت اسلامی کی لن ترانی کو سیاسی معاملہ قراردینا اور فوج کو تنقید کا نشانہ بنا ناافسوسناک ہے۔ الطاف حسین
 Posted on: 11/11/2013
بعض سیاسی تجزیہ نگاروں اور تجربہ کار اینکرپرسنز کامسلح افواج کے بارے میں جماعت اسلامیکی لن ترانی کو سیاسی معاملہ قراردینا اور فوج کو تنقید کا نشانہ بنا ناافسوسناک ہے۔ الطاف حسین 
یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ جماعت اسلامی کے رہنما مسلح افواج کوکھلے عام تنقید کانشانہ بنارہے ہیں لیکن حکومت گھناؤنے اور بیہودہ الزامات لگانے والوں کے بارے میں خاموشی اختیار کیے ہوئے ہے
مسلح افواج نے اپنے اصولی مؤقف کااظہارکیاہے توبعض سیاسی تجزیہ نگار اوراینکرپرسنزاسے سیاسی معاملہ قراردے رہے ہیں
اگر مسلح افواج پر بہتان تراشی کی جاتی رہے گی تو فوج کا میدان میں آکر جواب دینا فوج کے وقار کی خاطر لازمی بن جاتا ہے
یہ انتہائی افسوس کی بات ہے کہ فوج کی اخلاقی مدد کرنے کے بجائے اسکی تضحیک کرکے ملک دشمنوں کے ہاتھ مضبوط کیے جارہے ہیں 
لندن۔۔۔11، نومبر2013ء
متحدہ قومی موومنٹ کے قائد جناب الطاف حسین نے بعض سیاسی تجزیہ نگاروں اور تجربہ کار اینکرپرسنز کی جانب سے مسلح افواج کے بارے میں جماعت اسلامی کی لن ترانی کو سیاسی معاملہ قراردینے اور فوج کو تنقید کا نشانہ بنانے پر گہرے دکھ اور تشویش کا اظہار کیا ہے ۔ایک بیان میں جناب الطاف حسین نے کہا کہ اگر کوئی فرد، افراد، کوئی فریق یا جماعت اپنے ہی ملک کی فوج پر بے بنیاد الزام تراشیاں کرے اورملک و قوم کی حفاظت میں دشمنوں کے ہاتھوں ذبح تک کردیے جانے والے فوجیوں کو شہید کے بجائے ہلاک قراردے اور ظلم وتشدد، قتل وغارتگری اور مذبح خانہ چلانے والوں کے ہلاک ہوجانے پراسے شہید قرار دیا جائے یہ منطق میری سمجھ سے قطعی اور قطعی بالا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ یہ بڑی بدقسمتی کی بات ہے کہ جماعت اسلامی کے رہنمامسلح افواج کے جرنیلوں ، افسروں اورجوانوں کی شہادت کے باوجودمسلح افواج کوکھلے عام تنقید کانشانہ بنارہے ہیں لیکن موجودہ حکومت بھی مسلح افواج کے خلاف گھناؤنے اور بیہودہ الزامات لگانے والوں کے بارے میں خاموشی اختیار کیے ہوئے ہے اورجب مسلح افواج نے ایک بیان کے ذریعے اس پر اپنے اصولی مؤقف کااظہارکیاہے توبعض سیاسی تجزیہ نگار اوراینکرپرسنزاسے سیاسی معاملہ قراردے رہے ہیں اور الٹا فوج کوہی تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔جناب الطاف حسین نے کہاکہ اگر فوج پر تابڑ توڑ جھوٹے الزامات لگا کر اس کی رسوائی کا سلسلہ جاری رکھا جائے گا، مسلح افواج پر بہتان تراشی کی جاتی رہے گی اور حکومت بھی فوج کے جائز دفاع میں نہیں بولے گی تو پھر ایسی صورت میں فوج کا میدان میں آکر جواب دینا نہ صرف اس کی مجبوری بلکہ فوج کے وقار کی خاطر لازمی بن جاتا ہے ۔ جناب الطاف حسین نے کہاکہ اس وقت ملک جس نازک دور اور خطرات سے گزررہا ہے ان سے نمٹنے کیلئے فوج کو عوام کی اخلاقی مدد کی اشد ضرورت ہے لیکن یہ انتہائی افسوس کی بات ہے کہ فوج کی اخلاقی مدد کرنے کے بجائے اس کی تضحیک کرکے ملک دشمنوں کے ہاتھ مضبوط کیے جارہے ہیں جو کسی بھی طرح درست اورجائزنہیں۔



12/4/2016 8:10:46 AM