Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

پاکستانی فوج کے کرپٹ جرنیل ملک کے محافظ نہیں بلکہ جمہوریت اور انسانیت کے قاتل ہیں، قائد تحریک الطاف حسین


پاکستانی فوج کے کرپٹ جرنیل ملک کے محافظ نہیں بلکہ جمہوریت اور انسانیت کے قاتل ہیں، قائد تحریک الطاف حسین
 Posted on: 8/10/2018
پاکستانی فوج کے کرپٹ جرنیل ملک کے محافظ نہیں بلکہ جمہوریت اور انسانیت کے قاتل ہیں، قائد تحریک الطاف حسین
کرپٹ جرنیلوں کی وجہ سے آج صوبہ پنجاب سمیت ملک بھرمیں نعرے لگ رہے ہیں کہ ’’یہ جو دہشت گردی ہے ، اس کے پیچھے وردی ہے ‘‘
ہم فوج کے کرپٹ جرنیلوں کی ڈکٹیشن ہرگز نہیں لیں گے اورنہ ان کے ہاتھوں اپنے ظرف وضمیرکا سودا کریں گے ، الطاف حسین
کرپٹ جرنیلوں کو قوم کا حاکم نہیں بلکہ خادم بن کررہنا ہوگا ورنہ پھر جنگ ہوگی ، الطاف حسین
مارشل لاء نافذ کرنے اورآئین توڑنے کے جرم میں کسی ایک بھی جنرل کو سزا نہیں دی گئی،الطاف حسین
محب وطن فوجی افسران اور جوان اگر پاکستان کیلئے نہ اٹھے تو پھر پاکستان دنیا کے نقشہ پر نہیں رہے گا،الطاف حسین
اگر پاکستان بچانا ہے تو آپ کو آگے آنا ہوگا اور ہمت وجرات کا مظاہرہ کرنا ہوگا، الطاف حسین
پاکستانی فوج کے محب وطن ،ایماندار، دیانتدار ، حلف کا پاس رکھنے والے کمیشنڈ ، نان کمیشنڈ افسران اور فوجی جوانوں سے خصوصی خطاب

متحدہ قومی موومنٹ کے بانی وقائد جناب الطاف حسین نے کہاہے کہ پاکستانی فوج کے کرپٹ جرنیل ملک کے محافظ نہیں بلکہ جمہوریت اور انسانیت کے قاتل ہیں اورانہی کرپٹ جرنیلوں کی وجہ سے آج صوبہ پنجاب سمیت ملک بھرمیں نعرے لگ رہے ہیں کہ ’’یہ جو دہشت گردی ہے ، اس کے پیچھے وردی ہے ‘‘۔ جناب الطاف حسین نے فوج کے محب وطن اورایماندار کمیشنڈ و نان کمیشنڈافسران اورجوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ آپ آپس میں اتحاد کرکے ملک کو کرپٹ جرنیلوں سے پاک کریں اورملک میں ترکی کی طرح انقلاب لاکر فوج سے کرپٹ جرنیلوں کا خاتمہ کردیں۔ جناب الطاف حسین نے واشگاف الفاظ میں واضح کیاکہ ہم فوج کے کرپٹ جرنیلوں کی ڈکٹیشن ہرگز نہیں لیں گے اورنہ ان کے ہاتھوں اپنے ظرف وضمیرکا سودا کریں گے ، ان کرپٹ جرنیلوں کو قوم کا حاکم نہیں بلکہ خادم بن کررہنا ہوگا ورنہ پھر جنگ ہوگی ۔ ان خیالات کا اظہار جناب الطاف حسین نے گزشتہ روز اپنے آڈیو پیغام کے ذریعہ پاکستانی فوج کے محب وطن ،ایماندار، دیانتدار اوراپنے حلف کا پاس رکھنے والے کمیشنڈ ، نان کمیشنڈ افسران اور فوجی جوانوں سے خصوصی خطاب کرتے ہوئے کیا۔ 
اپنے خطاب میں جناب الطاف حسین نے کہاکہ فوج کے تھری اسٹارجرنیل اپنی تقاریر میں کہتے رہتے ہیں کہ فوج ایسا ادارہ ہے جہاں شیراور بکری ایک ساتھ گھاٹ پہ پانی پیتے ہیں۔ نان کمیشنڈ افسران اور سپاہی ان جرنیلوں کی باتوں میں آجاتے ہیں جبکہ فوج میں بڑا کھانا ہوتا ہے تو یہ جرنیل دکھانے کیلئے چکر لگاتے ہیں لیکن تھری اسٹارجرنیل یہ بڑا کھانا نہیں کھاتے ۔محاذ جنگ میں کرنل سطح کے کمیشنڈ افسران اپنے نان کمیشنڈ افسران اور فوجی جوانوں کے ساتھ نظرآتے ہیں جبکہ لیفٹننٹ جنرل کبھی دکھائی نہیں دیتے۔ سیلاب ، طوفان ، زلزلہ کو ئی بھی آسمانی یا زمینی آفات ہو یا جنگ کا محاذ ہو نان کمیشنڈ فوجی افسران اورجوان ہرجگہ موجود ہوتے ہیں لیکن تھری اسٹارجرنیل کہیں دکھائی نہیں دیتے اور جب یہ تھری اسٹارجرنیل اگر جاتے بھی ہیں تو محض دورہ کرنے جاتے ہیں اوران کے دورے کیلئے خصوصی انتظامات کیے جاتے ہیں ۔ جناب الطاف حسین نے کہاکہ فوج کے چھوٹے افسران اور جوان توپیں ، بندوقیں چلاتے ہیں ، ہینڈگرینیڈ پھینکتے ہیں اور سنگینوں کے ذریعہ مقابلہ کرتے ہیں جبکہ لیفٹننٹ جنرل اور میجرجنرل سے بندوقیں تک نہیں اٹھائی جاتیں تو یہ سنگینوں سے کیالڑیں گے ، فوجی جوانوں اور نچلی سطح کے افسران کے کھانے کے میس علیحدہ ہوتے ہیں ، ان کے لئے سادہ کھانا ہوتا ہے جبکہ تھری اسٹارجرنیلوں کے کھانے کے انتظامات بھی بادشاہوں کی طرح کے ہوتے ہیں ، یہ کرپٹ جرنیل محاذ جنگ اور زمینی وآسمانی آفات کے موقع پر اسلئے نہیں آتے کہ انہیں اپنی فیکٹریوں کے معاملات ، کاروبار، ہیروئین وچرس کی اسمگلنگ اوربیوی بچوں کے معاملات دیکھنے ہوتے ہیں ۔ ان کرپٹ جرنیلوں کے بچے ائیرکنڈیشنڈ اسکولوں میں تعلیم حاصل کرتے ہیں جبکہ فوج کے چھوٹے افسران اور جوانوں کے بچے زمین پربیٹھ کر تعلیم حاصل کرتے ہیں، فوج کے دوفیصد مراعات یافتہ طبقہ سے تعلق رکھنے والے ہی آئی ایس آئی اور ایم آئی کے چیف بنتے ہیں ، چیف آف آرمی اسٹاف بنتے ہیں ، جی ایچ کیو، فضائیہ اوربحریہ میں اعلیٰ پوزیشن پرفائز ہوتے ہیں ، فوج کے غریب سپاہی نلکے کا پانی پیتے ہیں جبکہ کرپٹ جرنیلوں کیلئے فرانس اور جرمنی سے پانی منگوایا جاتا ہے ۔جناب الطاف حسین نے کہاکہ فوج کے محب وطن اور ایماندار چھوٹے افسران اور جوانوں کے گھروں میں کوئی نوکر نہیں ہوتا جبکہ کرپٹ جرنیلوں کے گھروں پر ہرکام کیلئے علیحدہ علیحدہ ملازم ہوتے ہیں ، ان دوفیصد تھری اسٹار جرنیلوں یا آرمی چیف میں کوئی ایک ایسا نام نہیں ہے جوارب پتی نہ ہو۔ جنرل راحیل شریف نے آرمی چیف کے منصب پر رہتے ہوئے اربوں روپوں کی جائیداد بنالی،پھربھی پیٹ نہیں بھرا توفوج کے اصول وضوابط توڑ کر سعودی عرب میں نوکری کرلی اوراربوں روپے کمارہا ہے ، انہوں نے اپنے بیٹے کی شادی میں ایک ارب روپے سے زائد خرچ کردیئے جبکہ غریب سپاہی اپنے بچوں کی تعلیم اور شادی کیلئے ایک ایک پیسہ جمع کرتے ہیں ، کمیٹیاں ڈالتے ہیں اور گزارا کرتے ہیں ۔ یہ محب وطن اورایماندار افسران اور سپاہی دو دوسال تک سرحدوں پر ڈیوٹی انجام دیتے ہیں ، اپنے بیوی بچوں سے دوررہتے ہیں جبکہ کرپٹ جرنیل اگر دوہفتہ اپنے گھر سے دور ہوجائیں تو پریشان ہوجاتے ہیں ۔ جناب الطاف حسین نے کہا کہ تھری اسٹار جرنیلوں میں شائد دوفیصد افسران ایسے ہیں جو رزق حلال کماتے ہیں باقی سب کے سب کرپٹ جرنیل حرام کھاتے ہیں، حرام کمائی سے فرصت ملتی ہے تو سیاست میں مداخلت کرتے ہیں ، سیاسی پارٹی بناتے بگاڑتے ہیں اور تمام سیاسی جماعتوں کو شطرنج کی بساط پر اپنے مہرے سمجھ کر چال چلتے ہیں ، جس کو چاہیں غدار قراردے دیتے ہیں اور جسے چاہے صادق وامین بنادیتے ہیں اور جس کو چاہے عدالت کے ذریعہ نااہل قراردلوادیتے ہیں کیونکہ پاکستان کی عدلیہ فوج کی ماتحت بنی ہوئی ہے ۔ انہوں نے مزید کہاکہ پاکستان میں جتنی بھی مرتبہ مارشل لاء نافذ کیے گئے لیکن کسی ایک بھی چیف جسٹس آف پاکستان نے مارشل لاء نافذ کرنے اورآئین توڑنے کے جرم میں کسی ایک بھی جنرل کو سزا نہیں دی ، پاکستان کے عوام نے آج تک کسی تھری اسٹارجنرل کو سزا پاتے نہیں دیکھا۔جناب الطاف حسین نے کہاکہ ایم کیوایم نے 19، دسمبر2014ء قومی یکجہتی ریلی منعقد کی اور پاکستان کی مسلح افواج سے یکجہتی کااظہار کیا اورپاک فوج کو محب وطن سمجھتے ہوئے سیلوٹ کیاجس کا یہ صلہ دیا گیا کہ 22 ، ہزار مہاجروں کو ماورائے عدالت قتل کردیا گیا ، سینکڑوں کو لاپتہ کردیاگیا اور ہزاروں مہاجروں کو جیلوں میں قیدکردیا گیا، الطاف حسین کو غدار قراردیکر اس کے گھرپر تالا ڈال دیا گیا، سیاست میں آنے پر پابندی عائد کردی ، اس کے وفاداروں حتیٰ کہ72 سالہ بزرگ استاد پروفیسر ڈاکٹرحسن ظفرعارف کو بھی شہیدکردیا۔ جناب الطاف حسین نے کہاکہ یہ کرپٹ جرنیل ملک کے محافظ نہیں بلکہ جمہوریت اور انسانیت کے قاتل ہیں اورانہی کرپٹ جرنیلوں کی وجہ سے آج صوبہ پنجاب سمیت ملک بھرمیں نعرے لگ رہے ہیں کہ ’’یہ جو دہشت گردی ہے ، اس کے پیچھے وردی ہے ‘‘ ۔ انہوں نے کہاکہ الطاف حسین اورایم کیوایم نے فوج سے جس طرح یکجہتی کااظہارکیا اورفوج کی حمایت میں ملین مارچ نکالا، حتیٰ کہ فوج کو یقین دہانی کرائی کہ دشمن ملک سے لڑنے کیلئے ایم کیوایم کے ایک لاکھ کارکنان حاظر ہیں ، پاکستان کی فوج سے اس طرح اظہاریکجہتی کرنے کی عمران خان سمیت کسی میں ہمت نہیں ہے ۔
جناب الطاف حسین نے فوج کے محب وطن اورایماندار کمیشنڈ و نان کمیشنڈافسران اورجوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ آپ آپس میں اتحاد کرکے ملک کو کرپٹ جرنیلوں سے پاک کریں اورملک میں ترکی کی طرح انقلاب لاکر فوج سے کرپٹ جرنیلوں کا خاتمہ کردیں۔ اس موقع پر 19، دسمبر2014ء کو سانحہ آرمی پبلک اسکول پشاور کے شہداء، پاک فوج ، رینجرز اورپولیس کے شہداء کوخراج عقیدت پیش کرنے اور مسلح افواج سے اظہاریکجہتی کیلئے ایم کیوایم کے زیراہتمام قومی یکجہتی ریلی کی وڈیوفلم نشر کی گئی۔بعدازاں جناب الطاف حسین نے محب وطن کمیشنڈ ونان کمیشنڈ فوجی افسران اورفوجی جوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے دیکھا کہ ایم کیوایم نے کس طرح اور کتنے بڑے پیمانے پر مسلح افواج سے یکجہتی کااظہارکیا اور فوجی جوانوں کو ان کی بہادری پر سیلوٹ کیا۔اس لئے کہ الطاف حسین ایک سچا انسان ہے جو محبت پوری سچائی سے کرتا ہے اوراگردشمنی بھی کرتا ہے تو بہادری کے ساتھ کرتا ہے ۔ انہوں نے فوج کے کرپٹ جرنیلوں کومخاطب کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے ایم کیوایم کو ختم کرنے کی پالیسی اپنا رکھی ہے ، ایم کیوایم کے مرکز نائن زیروپر تالا ڈال دیا، مہاجرکارکنوں کو ماورائے عدالت قتل کردیا، انہیں لاپتہ کردیا اور گرفتارکرکے جیلوں میں اسیر کردیا ہے ، اگر آپ لوگوں نے اپنا رویہ تبدیل نہ کیاتو یہ دشمنی جنگ میں تبدیل سکتی ہے اوریادرکھنا کہ ہم جنگ سے ڈرنے والے لوگ نہیں ہیں۔ جناب الطاف حسین نے واشگاف الفاظ میں واضح کیاکہ ہم فوج کے کرپٹ جرنیلوں کی ڈکٹیشن ہرگز نہیں لیں گے اورنہ ان کے ہاتھوں اپنے ظرف وضمیرکا سودا کریں گے ، ان کرپٹ جرنیلوں کو قوم کا حاکم نہیں بلکہ خادم بن کررہنا ہوگا ورنہ پھر جنگ ہوگی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اب الطاف حسین اکیلا نہیں ہے بلکہ قوم کا ایک ایک محب وطن پنجابی ، بلوچ، سندھی، پختون، پشتون ، قبائلی ، سرائیکی، کشمیری، گلگتی، بلتستانی اورہزاروال بھی الطاف حسین کے ساتھ ہوگا اور ہم سب ملکر ملک کو کرپٹ فوجی جرنیلوں سے آزاد کراکر پاکستان میں عوام کی حکومت قائم کریں گے ۔ الطاف حسین ، حسینیت ؑ کا پیروکار ہے ، الطاف حسین کا سرکٹ تو سکتا ہے لیکن کرپٹ جرنیلوں کی بندوقوں سے خوف زدہ ہوکر جھک نہیں سکتا۔ جناب الطاف حسین نے ملک بھرکے عوام پرزوردیا کہ آئیں ہم سب مل کر کرپٹ جرنیلوں اورکرپٹ ججوں سے ملک کونجات دلائیں ، اس جدوجہد میں آپ کو الطاف حسین کا ساتھ دینا ہوگا ، آپ الطاف حسین کا ساتھ دیں یا نہ دیں ، یہ آپ کی مرضی پر منحصر ہے لیکن جب تک میں زندہ ہوں حق پرستی کا پرچم بلند رکھوں گا۔ جناب الطاف حسین نے محب وطن فوجی افسران اور جوانوں سے کہاکہ اگر آپ پاکستان کیلئے نہ اٹھے تو پھر پاکستان دنیا کے نقشہ پر نہیں رہے گا، اگر پاکستان بچانا ہے تو آپ کو آگے آنا ہوگا اور ہمت وجرات کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔ 
*****

10/20/2018 7:38:37 PM