Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

مون گارڈنز کراچی کے مکینوں کو ان کے گھروں سے نکالنا سراسر ظلم ، زیادتی اور کھلا تعصب ہے، ندیم نصرت


مون گارڈنز کراچی کے مکینوں کو ان کے گھروں سے نکالنا سراسر ظلم ، زیادتی اور کھلا تعصب ہے، ندیم نصرت
 Posted on: 11/13/2015
مون گارڈنز کراچی کے مکینوں کو ان کے گھروں سے نکالنا سراسر ظلم ، زیادتی اور کھلا تعصب ہے، ندیم نصرت
سندھ بالخصوص کراچی میں قائم غیرقانونی بستیاں، مذہبی انتہاء پسند دہشت گردوں کی آماجگاہیں بن چکی ہیں، ندیم نصرت
حکومت ، غیرقانونی تعمیرات گرانے میں دلچسپی رکھتی ہے توسب سے ان غیرقانونی بستیوں کا خاتمہ کرے، ندیم نصرت
جب مون گارڈنز کی زمین پر غیرقانونی قبضہ کرکے غیرقانونی فلیٹس بنائے جارہے تھے اور باقاعدہ تشہیر کرکے فروخت کیاجارہا تھا اس وقت محکمہ ریلوے، وفاقی اور سندھ حکومتیں اور انتظامیہ کہاں سوئی ہوئی تھیں؟ندیم نصرت
حکومت اور انتظامیہ کی اس مجرمانہ غفلت کی سزا مون گارڈنز کے ان غریب مکینوں کو کیوں دی جارہی ہے جنہوں نے
اپنا سب کچھ بیچ کر ان فلیٹس کی قیمت ادا کی ؟ ندیم نصرت
سپریم کورٹ اور سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس صاحبان انسانیت کے نام پر مون گارڈنز کے مکینوں کی بے دخلی کے احکامات واپس لیکر حکومت اور انتظامیہ کے ان وزراء ، اہلکاروں اور بے ضمیر بلڈرز کے خلاف ایکشن لیں، ندیم نصرت
لندن۔۔۔13، نومبر2015ء
متحدہ قومی موومنٹ کے قائم مقام کنوینر ندیم نصرت نے کہاہے کہ اگر حکومت ، غیرقانونی تعمیرات گرانے میں دلچسپی رکھتی ہے توسب سے پہلے صوبہ سندھ بالخصوص کراچی میں قائم غیرقانونی بستیوں کا خاتمہ کرے جو مذہبی انتہاء پسند دہشت گردوں کی آماجگاہیں بن چکی ہیں۔ ایک بیان میں ندیم نصرت نے کہاکہ مون گارڈنز کراچی کے مکینوں کو ان کے گھروں سے نکالنا سراسر ظلم ، زیادتی اور کھلا تعصب ہے ۔ انہوں نے کہاکہ حکومت اور انتظامیہ کو پورے شہر میں صرف مون گارڈنز ہی کیوں غیرقانونی نظرآرہا ہے ۔ کراچی میں اس وقت سینکڑوں غیرقانونی بستیاں تعمیر ہیں جن میں آباد لاکھوں مکینوں نے کراچی کا رخ کرکے سرکاری زمینوں پر قبضے کرکے اپنے مکانات تعمیر کیے اور سرکاری خزانے میں ان تعمیرات سے ایک پائی بھی وصول نہیں ہوئی ۔ ان بستیوں کے مکینوں کی جانب سے پانی ، بجلی اور دیگر یوٹیلٹی بل تک ادا نہیں کیے جاتے ۔ ندیم نصرت نے کہاکہ حکومت نے ان غیرقانونی بستیوں کے خلاف کبھی کوئی ایکشن نہیں لیا حتیٰ کہ ان غیرقانونی بستیوں کے خلاف عدالتی احکامات تک کی تعمیل نہیں کروائی ۔ آخر کیا وجہ ہے کہ تمام ترقانون کا نفاذ صرف اور صرف مون گارڈنز کے مکینوں پر ہی کیوں کیاجارہا ہے ؟ انہوں نے کہاکہ مون گارڈنز کے مکینوں نے باقاعدہ قیمت ادا کرکے اپنے فلیٹس خریدے ہیں اگریہ تعمیرات غیرقانونی تھیں تو ان کو تعمیر کیوں ہونے دیاگیا؟ جب اس زمین پر غیرقانونی قبضہ کرکے غیرقانونی فلیٹس بنائے جارہے تھے اور ان کو باقاعدہ تشہیر کرکے فروخت کیاجارہا تھا اس وقت محکمہ ریلوے، وفاقی اور سندھ حکومتیں اور انتظامیہ کہاں سوئی ہوئی تھیں؟ حکومت اور انتظامیہ کی اس مجرمانہ غفلت کی سزا مون گارڈنز کے ان غریب مکینوں کو کیوں دی جارہی ہے جنہوں نے اپنا سب کچھ بیچ کر ان فلیٹس کی قیمت ادا کی ؟ ندیم نصرت نے کہاکہ اگر حکومت کو غیرقانونی تعمیرات گرانے میں اتنی ہی دلچسپی ہے تو وہ پہلے سندھ کے چپہ چپہ خصوصاً کراچی میں قائم ان سینکڑوں غیرقانونی بستیوں کو ختم کرے جو آج خود سرکاری ایجنسیوں کی رپورٹس کے مطابق طالبان سمیت مختلف مذہبی انتہا پسندوں اور دہشت گردوں کی آماجگاہ بن چکی ہیں اور جن کے نام ایک مؤقر انگریزی اخبار نے گزشتہ دنوں شائع بھی کیے ہیں۔ ندیم نصرت نے سپریم کورٹ اور سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس صاحبان سے دردمندانہ اپیل کیکہ وہ انسانیت کے نام پر مون گارڈنز کے مکینوں کی بے دخلی کے احکامات واپس لیکر حکومت اور انتظامیہ کے ان وزراء ، اہلکاروں اور بے ضمیر بلڈرز کے خلاف ایکشن لیں جنہوں نے غیرقانونی زمین پر ان تعمیرات کی اجازت دی۔

9/25/2016 7:17:21 AM