Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

فوج یا فوجی ادارے سرحدوں کے محافظ اور لوگوں کی جان ومال کے تحفظ کے ذمہ دار ہوتے ہیں،الطاف حسین


فوج یا فوجی ادارے سرحدوں کے محافظ اور لوگوں کی جان ومال کے تحفظ کے ذمہ دار ہوتے ہیں،الطاف حسین
 Posted on: 6/11/2015
فوج یا فوجی ادارے سرحدوں کے محافظ اور لوگوں کی جان ومال کے تحفظ کے ذمہ دار ہوتے ہیں،الطاف حسین
جو کام فوج کا ہے وہ فوج کوکرنا چاہیے اور جو کام سول انتظامیہ یا پولیس کا ہے وہ انہیں کرنا چاہیے
رینجرزکی جانب سے زکوٰۃ فطرے اورقربانی کی کھالوں کے کے پیسے سے اسلحہ خرید نے کاالزام انتہائی افسوسناک ہے
میں بھی تمام کرپٹ لوگوں کی کرپشن کے بارے میں شواہدجمع کررہاہوں جو عوام کے سامنے پیش کروں گا کہ کس کے پاس کتنی دولت ہے، کہاں سے آئی اورکیسے آئی
جوبھتہ لیتے ہیں ان پر خدا کی ہزاربار لعنت اورجو بھتہ لینے کا جھوٹاالزام لگاتے ہیں ان پرلاکھ مرتبہ لعنت ہو
سب سے بڑی طاقت اللہ تعالیٰ کی ہے لہٰذا ایم کیوایم کے خلاف طاقت کاناجائز استعمال بند کیاجائے 
اے پی ایم ایس او نے مہاجر قومی موومنٹ کوجنم دیا اورمہاجرقومی موومنٹ نے متحدہ قومی موومنٹ کوجنم دیا جو ملک
بھرکے غریبوں اور محروموں کیلئے جدوجہد کررہی ہے
اے پی ایم ایس او کے 37 یوم تاسیس کے سلسلے میں منعقدہ اجتماعات سے بیک وقت ٹیلی فونک خطاب
لندن۔۔۔11، جون2015ء
متحدہ قومی موومنٹ کے قائدجناب الطاف حسین نے کہاہے کہ کسی بھی ملک کی فوج یا فوجی ادارے ملک کی سرحدوں کے محافظ اور لوگوں کی جان ومال کے تحفظ کے ذمہ دار ہوتے ہیں لہٰذاجو کام فوج کا ہے وہ فوج کوکرنا چاہیے اور جو کام سول انتظامیہ یا پولیس کا ہے وہ انہیں کرنا چاہیے۔ رینجرزکی جانب سے زکوٰۃ فطرے اورقربانی کی کھالوں کے حوالے سے یہ الزام تراشی کرناکہ اس سے اسلحہ خریداجاتا ہے ،انتہائی افسوسناک ہے۔ میں بھی تمام کرپٹ لوگوں کی کرپشن کے بارے میں شواہدجمع کررہاہوں جو عوام کے سامنے پیش کروں گا کہ کس کے پاس کتنی دولت ہے، کہاں سے آئی اورکیسے آئی۔ہم پرچاہے جتناہی ظلم کرلیاجائے لیکن ہم پاکستان میں انقلاب فرانس کی طرزپر انقلاب لائیں گے اور محروم عوام کوظلم کانشانہ بنانے والے جاگیرداروں، وڈیروں اورکرپٹ لوگوں کوعوامی عدالت سے سزا دلائیں گے۔ان خیالات کا اظہار جناب الطاف حسین نے اے پی ایم ایس او کے 37 یوم تاسیس کے سلسلے میں مختلف مقامات پر منعقدہ اجتماعات سے بیک وقت ٹیلی فونک خطاب کرتے ہوئے کیا۔ یوم تاسیس کا مرکزی اجتماع جناح گراؤنڈ عزیزآباد کراچی میں ہوا۔ ان اجتماعات میں اے پی ایم ایس او کے کارکنان کے علاوہ طلبا وطالبات نے ہزاروں کی تعداد میں شرکت کی۔اپنے خطاب میں جناب الطاف حسین نے اے پی ایم ایس او کے تمام ذمہ داروں اورطلبا وطالبات سمیت دنیا بھر میں ایم کیوایم کے کارکنوں اور ہمدردوں کو یوم تاسیس کی دلی مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہاکہ اے پی ایم ایس او محروموں کی تحریک ہے۔ اے پی ایم ایس او نے مہاجر قومی موومنٹ کوجنم دیا اورمہاجرقومی موومنٹ نے متحدہ قومی موومنٹ کوجنم دیا جوپورے ملک کے غریبوں اور محروموں کیلئے جدوجہد کررہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ میرے خطاب کو براہ راست نشر کرنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے لیکن یہ پابندیاں 37 سالہ جدوجہد میں بہت مرتبہ لگائی جاچکی ہے،میں اللہ کی رحمت اور اس کے انصاف پریقین رکھتے ہوئے جدوجہد کرتا رہا ہوں ، آج مجھے جلاوطنی میں 25 برس ہوگئے لیکن میری جدوجہد آج بھی جاری ہے ۔ جناب الطاف حسین نے اپیکس کمیٹی کے اجلاس میں دی جانے والی بریفنگ کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ تین روز قبل ڈی جی رینجرز اور دیگراکابرین کا یہ اجلاس گورنر ہاؤس میں منعقد ہوا تھاجس میں کہا گیا تھا کہ زکوٰۃ، فطرے اورچرم قربانی کی آڑ میں بھتہ لیاجاتا ہے، انہوں نے کہاکہ جوبھتہ لیتے ہیں ان پر خدا کی ہزاربار لعنت اورجو بھتہ لینے کا جھوٹاالزام لگاتے ہیں ان پرلاکھ مرتبہ لعنت ، اللہ تعالیٰ ان کا احتساب کرے گا۔ قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 246 کے ضمنی الیکشن کے دن کئی جگہوں پر پولنگ کا عمل تاخیرسے شروع کیا گیا ، کئی خواتین نے ٹیلی ویژن پر آکر شکایت کی کہ ان سے رینجرز کے اہلکار دریافت کررہے ہیں کہ وہ کس کوووٹ دیں گی؟ اور رینجرز کے بعض اہلکاروں کی جانب سے تو خواتین سے یہاں تک کہاگیا کہ وہ ’’بلے ‘‘ پر مہر لگائیں ۔ انہوں نے کہا کہ یہ باتیں مجھے خواتین اور بزرگوں نے بتائی ہیں اگرانہوں نے غلط بیانی سے کام لیا ہے تو وہ جانیں اور اللہ تعالیٰ جانے۔ 
جناب الطاف حسین نے کہاکہ ٹیلی ویژن پر این اے 246 کے ضمنی الیکشن کے نتائج کے موقع پر بعض متعصب، شاؤنسٹ اورایم کیوایم دشمن اینکرپرسن اور تجزیہ نگار خوشی سے کہہ رہے تھے کہ ضمنی الیکشن میں ایم کیوایم کے امیدوارکی کامیابی مشکل ہوگی کیونکہ رینجرز کے اہلکار نہ صرف پولنگ اسٹیشن کے اندر اور باہر تعینات ہیں بلکہ ووٹوں کی گنتی کاعمل بھی رینجرز کی نگرانی میں کیاجارہا ہے لیکن جب نتیجہ ایم کیوایم کے امیدوار کے حق میں آنے لگا تو یہی عناصر کہنے لگے کہ اگر ایم کیوایم جیت بھی گئی تو محض ایک ڈیڑھ ہزارووٹ سے ہی جیت سکے گی لیکن جب گنتی کاعمل مکمل ہوگیا تو یہ متعصب عناصر جب یہ بتانے لگے کہ حق پرست امیدوار نے 95 ہزار ووٹ حاصل کیے ہیں تو انکے منہ بن رہے تھے ۔جناب الطاف حسین نے کہاکہ تمام تر منفی پروپیگنڈہ ، میڈیاٹرائل اور رکاوٹوں کے باوجود جب ایم کیوایم نے ضمنی الیکشن میں عظیم الشان کامیابی حاصل کرلی تو ایم کیوایم دشمن عناصر سوچنے لگے کہ اب کیاکریں، پھر نیاجال لائے پرانے شکاری کے مصداق انہوں نے زکوٰۃفطرہ اورقربانی کی کھالیں زبردستی جمع کرنے کا جھوٹاالزام عائد کردیا۔انہوں نے کہاکہ رینجرزکی جانب سے زکوٰۃ فطرے اورقربانی کی کھالوں کے حوالے سے یہ الزام تراشی کرناکہ اس سے اسلحہ خریداجاتا ہے ،انتہائی افسوسناک ہے ۔ یہ زکوٰۃ فطرے کاپیسہ ہے ہیروئن کانہیں جس سے اسلحہ خریداجاتاہو۔ جناب الطاف حسین نے ایم کیوایم کے تمام ذمہ داروں ، کارکنوں اور ہمدردوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ اب رمضان المبارک میں زکوٰۃ ،فطرہ، صدقہ اور عیدالاضحی کے موقع پر قربانی کے جانوروں کی کھالیں جمع کرنا آپ کیلئے امتحان اور انا کامسئلہ بن چکا ہے ، خواہ آپ کی راہ میں کتنی ہی رکاوٹیں کیوں نہ کھڑی کردی جائیں آپ کو حکمت عملی کے تحت اس امتحان میں کامیاب ہونا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ہم زکوٰۃ ،فطرہ، صدقات اور قربانی کھالیں ،خلق خدا کی خدمت کیلئے جمع کرتے ہیں ، ان رقوم سے ایمبولینس اور میت گاڑیاں خریدتے ہیں، کشمیرمیں قیامت خیز زلزلے ہوں یا بلوچستان اورسندھ کے تھرمیں قحط یاپنجاب میں طوفان ہو ہر موقع پر خدمت خلق فاؤنڈیشن کے تحت متاثرین کی امداد کی جاتی رہی ہے ۔ جناب الطاف حسین نے کہاکہ حکمرانوں کے بقول 1999ء میں جنرل پرویزمشرف نے آئین توڑا۔حقیقت تویہ ہے کہ 12 اکتوبر 1999ء کوجس وقت نوازشریف حکومت کوبرطرف کیاگیاتواس وقت جنرل پرویزمشرف توہوائی جہازمیں سفرکررہے تھے، اس وقت 
زمین پر جوجرنیل موجودتھے انہوں نے وزیراعظم نوازشریف کی حکومت کاتختہ الٹا، انہوں نے نوازشریف کوحراست میں لیالیکن یہ کہاں کاانصاف ہے کہ حکومت برطرف کرنے اورآئین توڑنے پر جنرل پرویزمشرف کوتوگرفتارکرکے ان پرآرٹیکل 6کامقدمہ بنادیا گیا لیکن جن افسران نے نوازشریف کاتختہ الٹاان کوچھوڑدیاگیا۔جنرل پرویزمشرف پرآرٹیکل 6کامقدمہ شوق سے بنائیں لیکن آرٹیکل 6 کے تحت بالواسطہ یابلاواسطہ ساتھ دینے و الوں کے خلاف بھی کارروائی کی جائے ۔جناب الطاف حسین نے کہاکہ آج سندھ، پنجاب، بلوچستان اورخیبرپختونخوا میں غریبوں پر کیا گزررہی ہے ، کس طرح جاگیردار وڈیروں نے اپنی نجی جیلیں بنارکھی ہیں جہاں غریبوں کو قید کرکے رکھا جاتاہے لیکن یہ سب کچھ رینجرز کونظرنہیں آتا۔ رینجرزکوکراچی میں اسلحہ نظرآتاہے لیکن چندروزقبل خیبرپختونخوامیں بلدیاتی انتخابات کے موقع پر جدید اسلحہ کا استعمال کیاگیااورگولیاں چلائی گئیں جس سے کئی افرادجاں بحق ہوگئے لیکن رینجرزکویہ بھی نظرنہیں آیا ۔ انہوں نے کہاکہ اللہ تعالیٰ سب کچھ دیکھ رہا ہے، سب سے بڑی طاقت اللہ تعالیٰ کی ہے لہٰذا ایم کیوایم کے خلاف طاقت کاناجائز استعمال بند کیاجائے ۔ جناب الطاف حسین نے کہاکہ آج بعض سیاسی ومذہبی جماعتوں کے رہنماعوام کوبیوقوف بنانے کیلئے انقلاب کا نعرہ لگاتے ہیں حالانکہ انہیں انقلاب کے معنی ومفہوم تک معلوم نہیں ہیں اورانہوں نے آج تک ایک طمانچہ تک نہیں کھایا۔انہوں نے کہا کہ عمران خان نے فوج کے جرنیلوں کے بارے میں تویہ کہہ دیاکہ ’’ 20ہزارلوگ سڑکوں پرلے آئیں توجرنیلوں کاپیشاب نکل آئے گا ،یہ اتنے بزدل ہوتے ہیں ‘‘ لیکن انہوں نے اپنے بارے میں نہیں بتایا۔جناب الطاف حسین نے کہاکہ ہم پرچاہے جتناہی ظلم کرلیا جائے لیکن ہم پاکستان میں انقلاب فرانس کی طرزپر انقلاب لائیں گے اور محروم عوام کوظلم کانشانہ بنانے والے جاگیرداروں، وڈیروں اورکرپٹ لوگوں کوعوامی عدالت سے سزادلائیں گے۔انہوں نے انکشاف کرتے ہوئے کہاکہ میں بھی تمام کرپٹ لوگوں کی کرپشن کے بارے میں شواہدجمع کررہاہوں جو عوام کے سامنے پیش کروں گا کہ کس کے پاس کتنی دولت ہے، کہاں سے آئی اورکیسے آئی ۔انہوں نے کہا کہ ہم پر جھوٹے الزامات لگانے والے مجھ پر چاہے جومقدمہ بنانا چاہیں بنالیں اورمجھے جس عدالت میں چاہیں لے جائیں میں اس کیلئے تیارہوں۔ خداجانتاہے کہ میں نے نہ جھوٹ بولا اور نہ ہی کوئی قانون توڑاہے، میرادامن صاف ہے اور میرا ضمیر مطمئن ہے۔ جناب الطاف حسین نے بزرگوں کومخاطب کرتے ہوئے کہاکہ آپ اپنے بچوں کواے پی ایم ایس او کے قیام کی وجوہات اورتاریخ ضرور بتائیں اوریہ بھی بتائیں کہ ان کی شناخت کیاہے کیونکہ جب وہ ملازمت کیلئے انٹرویودینے جائیں گے توان سے یہی پوچھاجائے گا کہ آپ کہاں پیداہوئے، آپ پیچھے سے کہاں سے ہیں، آپ کے باپ داداکہاں پیداہوئے ،جب وہ بتائیں گے کہ وہ انڈیامیں پیدا ہوئے اورہجرت کرکے آئے توان سے کہاجائے گاکہ آپ مہاجرہیں لہٰذاآپ کونوکری نہیں دی جاسکتی۔ انہوں نے کہاکہ حضرت علیؓ کاقول ہے کہ حکومت کفر سے قائم رہ سکتی ہے لیکن ظلم وجبرسے قائم نہیں رہ سکتی ۔ ہم پر مظالم ڈھائے جارہے ہیں، نائن زیرو پر ہمارے پیارے جواں سال کارکن وقاص علی شاہ کوگولیاں مارکرکے شہیدکردیاگیااورالٹاہم پرہی طرح طرح کے جھوٹے الزامات لگائے جارہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ جو عناصر اپنی طاقت کے بل پر بانیان پاکستان کی اولادوں کو غدارقراردے رہے ہیں وہ پاکستان کوتباہ وبربادکرناچاہتے ہیں۔وہ چاہے جتنی منصوبہ بندی کرلیں لیکن وہ چار یاپانچ کروڑ مہاجروں کو سمندر میں نہیں پھینک سکتے اورانہیں ختم نہیں کرسکتے۔ کوئی دیکھے یانہ دیکھے اللہ تعالیٰ یہ سب ظلم وستم دیکھ رہاہے اوروہی بہترانصاف کرنے والا ہے ۔ انہوں نے دعا کی کہ اللہ تعالیٰ ہم سب پر کرم فرمائے اورظلم وستم کرنے والوں کوعقل دے۔
English 

12/3/2016 9:58:56 PM