Altaf Hussain  English News  Urdu News  Sindhi News  Photo Gallery
International Media Inquiries
+44 20 3371 1290
+1 909 273 6068
[email protected]
 Events  Blogs  Fikri Nishist  Study Circle  Songs  Videos Gallery
 Manifesto 2013  Philosophy  Poetry  Online Units  Media Corner  RAIDS/ARRESTS
 About MQM  Social Media  Pakistan Maps  Education  Links  Poll
 Web TV  Feedback  KKF  Contact Us        

Guardian: Pakistan press freedom under pressure from army

Guardian: Pakistan press freedom under pressure from army
 Posted on: 9/14/2015
Journalists claim they are forced to self-censor criticism of the military after indirect threats from army officials
Courtesy: Guardian

General Raheel Sharif at a ceremony to mark Defence Day in Rawalpindi, Pakistan, on 6 September. Photograph: Xinhua/Landov/Barcroft Media

Hamid Mir knew one of the guests on his nightly television show had made a mistake the moment he blurted out the name of the country’s army chief without due deference.

“He just said ‘Raheel Sharif, Raheel Sharif’ without calling him general,” Mir says of a recent episode of his influential Capital Talk programme. “I knew immediately the words came out it would be cut.”

At a time of intense pressure on the media to cooperate with an army public relations campaign that is burnishing the image of General Sharif, channels routinely edit out or drop the sound on the mildest criticism of the military.

Even the country’s only Nobel peace prize winner, the schoolgirl activist Malala Yousafzai, was briefly silenced in early August when she said in an interview with Aaj TV that the prime minister had told her he was unable to spend more money on education because of pressure to fund military operations.

Mir fears that behind the pressure for self-censorship lurk “anti-democratic forces deliberately trying to undermine political institutions by giving more importance to the army.”

Leading journalists claim to have received indirect threats from army officials who warn them they are being targeted by terrorists or that their coverage is raising suspicions they have been compromised by the Indian intelligence service.

There is little doubt the military has rehabilitated its public reputation after the damage done to its popularity in the final years of the rule of Pervez Musharraf, the coup-making general forced from power in 2007.

Media workers say the current unbridled support for the army comes from the need to support the institution at a time when soldiers are dying in a war against Islamist militants. But it also reflects draconian new legal requirements placed on broadcasters. Last month the information ministry issued a sweeping code of conduct that made it a condition of a broadcaster’s licence to not air material that “contains aspersions against the judiciary or armed forces”.

Television stations were also required to have a “delaying mechanism” on live programmes to enforce the restrictions.

Last week the Lahore high court ordered Pemra, the country’s media regulator, to ban all coverage of the speeches and even photographs of the leader of the Muttahida Qaumi Movement (MQM), the country’s fourth biggest political party, which is reeling from an army-led crackdown in Karachi.

Altaf Hussain, who runs the MQM from self-exile in London, was accused in court of committing treason for issuing an incendiary speech in which he lambasted the army and hinted top generals were involved in corruption.

Most media companies need little encouragement to stay on the right side of the army given memories of all-out war with Geo TV in April 2014. The popular channel triggered military fury when it aired accusations that the head of the army’s intelligence wing had been behind the near fatal shooting of Mir, its star journalist.

Cable television providers were encouraged to drop Geo from their lineup while advertisers deserted the channel.

Pakistani journalist Hamid Mir, centre, using wheelchair, after appearing at a judicial commission in Islamabad investigating a gun attack on him in 2014. Photograph: T Mughal/EPA

Mir said his bosses tell him to avoid controversial stories because it will “make trouble for colleagues”. “They say mysterious people call the advertisers and tell them to stop advertising with Geo and then we won’t be able to pay salaries on time,” he said.


Even to suggest Pakistan’s army, with its long history of coups and indirect rule of the country, should stay out of politics is completely beyond the pale, said Mir.

The media has given little attention in recent weeks to a supreme court investigation of well-founded allegations of corruption within the army’s property empire. And there has been hardly any discussion of the slow progress in sending home the huge numbers of people displaced by operations against the Taliban in North Waziristan.

While the media enthusiastically covers stories about corruption and incompetence among civilian politicians, General Sharif receives fawning coverage. Last week Kamran Khan, one of the country’s most famous journalists, devoted much of his nightly show on Dunya News to what he claimed was a growing public clamour for General Sharif to be given a second term rather than be allowed to retire in November next year.

Pakistani journalists credit the general in charge of the army’s public relations department, Asim Bajwa, with crafting an image of Sharif as a dynamic general who was not afraid to take on the Pakistani Taliban.

Footage of Sharif visiting frontline troops or receiving foreign leaders in his office regularly push the country’s civilian leadership off the news bulletins.

General Bajwa said his job was simply to “share genuine information with the people”.

“We are not asking the media to do this or that, or to censor anything,” he said. “People appreciate the work of the army because the reality on the ground is improving.”

Abbas Nasir, a former editor of Dawn, an English-language daily paper, said it was unlikely General Sharif would want a second term given the anger it would be likely to cause within the army. But overconfidence could yet lead to the repeat of the disastrous mistakes of the past.

“My worry is this completely one-sided praise, if it gets to the head of some military leaders, may lead us back to mis-adventurism, whether that’s a march on Islamabad or some sort of an attack on India,” he said. “If you are constantly told you are great, sooner or later you will believe it.”

Urdu Translations:

ابتدایئہ : برطانیہ کے مؤقر جریدے گارجئن میں شائع ہونے والے ایک اہم مضمون کا اردو ترجمہ پیش خدمت ہے۔ یہ مضمون گارجئن کی 14 ستمبر کی اشاعت میں شائع ہوا اور اسکی ویب سائٹ پر دستیاب ہے۔ مضمون کی اہمیت کے پیش نظر  اور اہل وطن کو عالمی ذرائع ابلاغ پر پاکستانی منظر نامے سے باخبر رکھنے کی نیت سےاسے اردو جاننے والے قاریئن کیلئے پیش کیا جا رہا ہے۔  مضمون کے مصنف جان بون ہیں جو اسلام آباد میں گارجئن کے نما یئندے ہیں۔ ترجمہ کرتے ہوئے نیک نیتی اور ہر ممکن احتیاط سے کا م لیا گیا ہے اس کے باوجود کسی بھی غلطی کو محض انسانی غلطی  ہی پر محمول کیا جائے۔
پاکستان میں آزادئی صحافت آرمی کے دباؤ میں
حامد میرجانتے تھے کہ انکے اس رات کے ٹی وی پروگرام میں موجود ایک مہمان اس لمحے غلطی کر بیٹھے ہیں جب انہوں نے ملک کے آرمی چیف کا نام بڑی بے ادبی کے ساتھ لیا۔
کیپیٹل ٹاک حامد میر کا تاثرانگیزپروگرام ہے۔ اس کے ایک حالیہ پروگرام میں بات کرتے ہوئے حامد میرکہتے ہیں کہ اس مہمان نے جنرل راحیل شریف کے بجائے راحیل شریف راحیل شریف کہا۔ حامد میرکہتے ہیں کہ وہ اسی وقت سمجھ گئے تھے کہ یہ الفاظ حذف کردیئے جایئں گے۔
ایک ایسے وقت جب ذرائع ابلاغ پر شدید دباؤ ہے کہ وہ آرمی کے پبلک ریلیشن مہم میں تعاون کرے جو اس وقت جنرل شریف کے امیج کو چمکانے میں مصروف ہے توتمام چینلز کا معمول بن چکا ہے کہ وہ آرمی پر کی جانے والی انتہائی معمولی تنقید کو بھی یا تو ایڈٹ کردیں یا اسکی آواز کو ہی دبا دیں۔
حتی کہ ملک کی واحد نوبل انعام یافتہ اسکول کی طالبہ ملالہ یوسف زئی کو بھی اس وقت خاموش کرادیا گیا جب وہ آج  ٹیلے وژن پر ایک انٹرویو میں کہہ رہی تھی کہ وزیر اعظم نے اسے بتایا تھا کہ وہ تعلیم پرزیادہ خرچ کرنے کے قابل نہیں ہیں کیونکہ ان پرشدید دباؤ ہے کہ وہ فنڈز آرمی آپریشن پرخرچ کریں۔
حامد میر کو ڈر ہے کہ غیر جمہوری قوتیں میڈیا پر عائد کردہ سیلف سینسر شپ کے اس دباؤ کے ذریعے آرمی کوزیادہ سے زیادہ اہمیت دے کرسیاسی اداروں کوجانتے بوجھتےکمزور کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔
کئی معروف صحافیوں کا دعوی ہے کہ انہیں آرمی آفیشئلز کی جانب سے بالواسطہ دھمکیاں ملی ہیں جن میں انہیں تنبیہ کی گئی ہے کہ وہ دہشتگردوں کے نشانے پر ہیں، یا یہ کہ انکی کوریج سے یہ شبہ پیدا ہوتا ہے کہ وہ بھارتی انٹیلی جینس ایجنسیز کے ساتھ سمجھوتہ کر چکے ہیں۔
اس بارے میں تھوڑا سا شبہ ہے کہ آرمی اپنی عوامی مقبولیت کے اس نقصان کو بحال کرسکی ہے جو اسے پرویز مشرف کی حکمرانی کے آخری برسوں میں پہنچا تھا۔ پرویز مشرف فوجی انقلاب لانے والے جنرل تھے جنہیں دوہزار سات میں طاقت سے محروم ہونا پڑا تھا۔
ذرائع ابلاغ سے تعلق رکھنے والے لوگوں کا کہنا ہے کہ آرمی کیلئے حالیہ بے لگام حمایت اس ضرورت کے تحت آرہی ہے جب فوج کے سپاہی اسلامی شدت پسندوں کے خلاف جنگ میں جانیں دے رہے ہیں۔ لیکن اسکے ساتھ ہی یہ ان ڈریکولائی قانونی ضروریات کی بھی عکاسی کرتی ہے جو نشریاتی اداروں پرعائد کردی گئی  ہیں۔ گذشتہ ماہ وزارت اطلاعات نے ایک ضابطہ اخلاق جاری کیا جس کے تحت نشریاتی لایئسنس کے اجراء کیلئے شرط رکھی گئی ہے کہ وہ کوئی ایسا مواد نشر نہیں کریں گے جس میں عدلیہ یا مسلح افواج کی نیک نامی پربہتان طرازی کی گئی ہو۔ 
ساتھ ہی ٹیلے وژن اسٹیشنزکو بھی پابند کیا گیا ہے کہ وہ تاخیری میکینزم کو اپنے لایئو پروگراموں میں پابندیوں کا اطلاق کرنے کیلئے استعمال کریں۔
گذشتہ ہفتے ملک کے میڈیا ریگولیٹرادارے پیمرا نے لاھور ہائی کوٹ کے احکامات پر متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کی تقاریر، بیانات حتی کہ ان کی تصاویر تک کے ذرائع ابلاغ پر نشر کرنے پر پابندی عائد کردی۔ متحدہ قومی موومنٹ ملک کی چوتھی بڑی سیاسی پارٹی ہے جو اس وقت آرمی کی زیر قیادت ایک کریک ڈاؤن کا شکار ہے۔
الطاف حسین لندن میں جلاوطن ہیں اور وہیں سے ایم کیو ایم کی قیادت کرتے ہیں۔ ان پراشتعال انگیز تقریر کرنے پرعدالت میں غداری کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ ان تقاریر میں انہوں نےآرمی پر شدید تنقید کی تھی اور اس جانب اشارہ کیا تھا کہ فوج کے بڑے جنرل بدعنوانیوں میں ملوث ہیں۔  
بیشترمیڈیا کمپنیوں کوآرمی کے ساتھ کھڑے رہنے کیلئے تھوڑی سی حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے جنہیں اپریل 2014 میں جیو ٹی وی کے ساتھ بھرپورطاقت سےلڑی جانے والی جنگ کی یاددلائی جاتی ہے۔ یہ مقبول ٹی وی چینل ملٹری کے غیض وغضب کا اس وقت نشانہ بنا جب اس نے اپنی نشریات میں الزام لگا یا کہ اس کے اسٹار صحافی حامد میر پرانتہائی مہلک قاتلانہ حملے کے پیچھےآرمی کے انٹیلی جنس ونگ کا ہاتھ تھا۔ (اس وقت)
کیبل ٹیلے وژن آپریٹرزکی حوصلہ افزائی کی گئی کہ جیو ٹی وی کی نشریات کو بند کریں جبکہ مشتہرین نے بھی اسے اشتہاروں سے محروم کردیا۔
حامد میر کہتے ہیں کہ مالکان نے انہیں کہا کہ وہ متنازعہ کہانیاں بند کردیں کیونکہ یہ انکے ساتھیوں کیلئے پریشانی کا باعث بنیں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ  پراسرارلوگوں نے اشتہاردینے والوں کو کال کی ہے اورانہیں کہا گیا ہے کہ وہ جیو کو اشتہارات دینا بند کردیں اوراسکے بعد صورتحال یہ ہوئی کہ ہم بروقت تنخواہیں دینے سے بھی قاصر ہوچکےتھے۔
حامد میر کا کہنا ہے کہ نوبت یہاں تک پہنچی ہے کہ آرمی کو جسکی اقتدار پر قبضے اور بلاواسطہ حکومت کرنے کی ایک طویل تاریخ ہے یہ تجویز دینا کہ وہ سیاست سے دور رہے مکمل طور پرامکان سے باہرہوچکا ہے
حالیہ ہفتوں ميں ذرائع ابلاغ  پر سپریم کورٹ کی ایک حالیہ تحقیقات پر جوآرمی میں ایک پراپرٹی ایمپائرکے حوالے سے الزامات سے متعلق ہیں بہت معمولی توجہ دی  گئی ہے۔ علاوہ ازیں وزیرستان میں طالبان کے خلاف آرمی آپریشن سے ہونے والے ایک بہت بڑی نقل مکانی میں انتہائی سست رفتاری کے موضوع پر تو شائد ہی ذرائع ابلاغ پر کوئی بحث ہوئی ہو ۔
ایسے وقت میں جب میڈیا سیاستدانوں کی بدعنوانیوں اور نا اہلی پربڑی گرم جوشی کا مظاہرہ کررہا ہے تو جنرل راحیل شریف کیلئے چاپلوسی سے بھر پور کوریج کی جا رہی ہے۔ گذشتہ ہفتے ملک کے ایک بہت مشہور صحافی کامران خان نے دنیا ٹی وی پراپنے رات کے شوکابیشتروقت اس تاثر پر بات کرنے کیلئے وقف کیا جس کے مطابق جنرل راحیل شریف کے عوامی گلیمرمیں روز افزوں اضافے کا مطلب انہیں آیئندہ برس نومبر میں ریٹائرہونے کی بجائے انہیں عہدے کی ایک اور مدت دیا جانا ہے۔
پاکستانی صحافی جنرل راحیل شریف کے ایک متحرک جنرل کے طور پر امیج بنانے کا سہرا آرمی کے تعلقات عامہ کے محکمے کے سربراہ عاصم باجوہ کے سرباندھتے ہیں جنہوں نے جرنل راحیل شریف کو ایک ایسے متحرک جنرل کے طور پر پیش کیا ہے جو پاکستانی طالبان سے نمٹنے میں ہرگزکوئی خوف محسوس نہیں کرتا ۔
ملک کے سیاسی رہنما جنرل شریف کے ایسے ٹی وی فوٹیج کی وجہ سے خبروں سے باہر ہوگئے ہیں جن میں وہ اگلے محاذوں کا دورہ کررہے ہیں یا غیر ملکی رہنماؤں سے اپنے دفتر میں ملاقات کررہے ہیں ۔ جنرل باجوہ کا کہنا ہے کہ ان کا کام صرف درست معلومات کوعوام تک پنہچانا ہے۔
وہ کہتے ہیں کہ ہم میڈیا سے نہیں کہتے کہ یہ کرو یا وہ کرو۔ انکے مطابق عوام آرمی کے کام کی تحسین کرتے ہیں کیونکہ زمین حقیقت یہی ہے کہ بہتری آ رہی ہے
انگریزی روزنامہ ڈان کے ایک سابق ایڈیٹر عباس ناصر کا کہنا ہے کہ ایسا نظر نہیں آتا کہ جنرل راحیل شریف ایک اور مدت کیلئے (ملازمت میں توسیع) چاہیں گے۔ ایسا اسلئے کہ فوج میں اس پر ناراضگی پھیل سکتی ہے۔ تاہم حد سے تجاوز کرنے والی خود اعتمادی بہرحال ایسے مقام تک لے جا سکتی ہے جہاں ماضی کی تباہ کن غلطیوں کا اعادہ ہوسکتا ہے۔ 
عباس ناصر کا مزید کہنا ہے کہ انکی پریشانی کا سبب یہ یکطرفہ تعریف وتوصیف ہے اوراگر کچھ جنرلوں کے سر میں یہ سودا سما گیا تو یہ ہمیں ایک بار پھرواپس غلط مہم جوئی کی طرف لے جا سکتی ہے، یہ غلط مہم جوئی اسلام آباد کی جانب مارچ یا بھارت پرحملے کی کوئی صورت میں بھی ہوسکتی ہے۔ عباس ناصر کہتے ہیں کہ اگر آپ کو بار بار یہ کہا جائے کہ آپ تو بڑے عظیم ہیں تو جلد یا بدیر آپ اس پر یقین کرنے ہی لگیں گے۔

10/23/2016 9:25:06 AM